Darchini ke Fayde Benefits of Cinnamon

Darchini ke Fayde Ya Dalchini Benefits Janiye Cinnamon in Hindi Urdu
Janiye benefits of Cinnamon, isko Urdu mein Darchini kehte hein jiske fayde is page par beyan kiye gaye hein. Aap isko Daar Cheeni bhi keh sakte hein, jabke kai log isko Dalchini bhi kehte hein.

Yeh darasal aik darakht ki chhaal hoti hei. Isko garam masaleh ke taur par khano ko khush zayqa banane keliye istemal kiya jaata hei. Jabke hakeem hazraat iska istemal dawaiyo mein qadeem daur se karte aa rahe hein.

Yeh aik farhat bakhsh masalah hei. Mizaj ke lehaz Dalchini ki taseer garm aur khushk hoti hei, lekin iske sath Qaabiz bhi hoti hei. Zayqe ke lehaz se meethi aur khushbu dar hoti hei.

Dar chini ke Fayde Ya benefits of Cinnamon in Hindi/Urdu


Darchini cholesterol ko kam karne mein intehayi mosassir hei. Yeh khoon ki naaliyo mein ruki hui nuqsan deh chiknai ko nikal kar bilkul saaf kar deti hei. Jis se nasirf cholesterol normal ho jaata hei balke Diabetes ke marz mein bhi bohat fayda hota hei. Is maqsad keliye aap rozana darchini ke powder ki aadhi chamchi din mein 2 baar paani ke sath le sakte hein.


Darchini Khansi aur Dama ke marz mein bohat mufeed hei. Iske liye iske powder ko brabar miqdar mein Shehed mein mila kar chaata jaye to fayda hota hei. Yeh saddo ko kholti hei aur Gas ke ikhraaj ko aasan banati hei. Bhook ki kami ko door karti hei.

Sardi ke mausam mein jab baar baar Peshab aata ho to aadha chamcha Darchini ka powder doodh ke sath khaya jaye to fayda hota hei. Jabke woh bache jo raat ko aksar peshab kar dete hein, unke liye yeh Totka aazmaiye. Cinnamon yani Darchini ka aik tukra doodh mein daal kar ubaaliye. Ab is tukre ko nikal kar yeh doodh bache ko pila dejiye to bohat afaaqa ho ga.

Agar Nazla ki shikayat ho to chaye banate waqt Darchini ko ubalte hue paani mein daal kar dam dejiye. Ab is chaye ko peene se aaram aa jaye gaa.


Darchini ka tail bhi nikala jaata hei. Iska mizaj bhi Garam aur khushk hota hei. Yeh dil aur dimagh ko farhat deta hei. Nizam e tanaffus ko mutaharrik karta hei. Mayda aur jigar ko taqat deta hai aur balgham ko bhi khaarij karta hei.

Kuch mazeed Darchini (Cinnamon) ke fayde


China ke mahireen ka dawa hei ke Darchini ke powder aur Shehed ki chaye peene waale log kabhi boordhe nahi hote. Iskeliye 1 cup pani mein 1 chamach Shehed aur 2 chutki Darchini ka powder daal kar isko ubaliye. Aur isko chaye ki tarah pejiye. Is chaye ke rozana istemal se jild ke cells jawan rehte hein aur jild mein dheela pan nahi aata. Umar barhne ke bawajood jawano jesi quwat qayim rehti hei.


Darchini ke tail ko Nafs par bator Tilla istemal kiya jaye to yeh nafs ko taqat deta hei.

Gurdo ke dard ya Rehem ke dard ki soorat mein Cinnamon ke tail ke chand qatre doodh mein mila kar peene se aaram milta hei. Jabke dard ke maqam par iski maalish karna bhi mufeed hei.

Zehreele hashraat ke kaatne ki soorat mein Darchini ko pani mein pees kar kaatne waali jagha par laip kejiye. Bohat aaram mile ga.


Nassyan yani bhoolne ke marz mein Darchini ka powder 2 maasha neem garam doodh mein milaiye. Subha aur sham 2 time isko dawa ke taur par pejiye. Is se na sirf Nassyan door ho ga balke mardana taqat mein bhi izafa ho ga.

Darchini ke Fayde ya Cinnamon benefits ko dekhte hue ham logo ko iska regular istemal karna chahiye.

Darchini ke Fayde Ya Dalchini Benefits Janiye Cinnamon in Hindi Urdu

بواسیر کا علاج اور پرہیز جانئے اسکی علامات اور آسان دیسی نسخے

بواسیر کا علاج اور پرہیز جانئے اسکی علامات اور آسان دیسی نسخے

 بواسیر کا علاج اور پرہیز جاننے کے لیے یہ مضمون آخر تک پڑھیں۔ پہلے جانتے ہیں کہ یہ مرض کیا ہے۔ انسان کے مقعد میں جو خون کی رگیں ہوتی ہیں ان میں جب سوزش، خارش، ورم یا چھالے سے بن جائیں تو اس کیفیت کو بواسیر کہا جاتا ہے۔ جب یہ مرض ہوتا ہے تو اس کی بہت سی وجوہات ہو سکتی ہیں۔ یہ مرض موروثی بھی ہو سکتا ہے لیکن دائمی قبض اس کی سب سے بڑی وجہ ہے۔

قبض کے باعث جب پاخانہ سخت ہو جاتا ہے تو اس کو خارج کرنے میں مشکل پیش آتی ہے۔ یوں زور لگانے کی وجہ سےمقعد کی رگوں پر دباو پڑتا ہے اور ان رگوں میں سوزش پیدا ہو جاتی ہے۔ اگر اس موقع پر احتیاط نہ کی جائے اور یہ کیفیت مسلسل رہنے لگے تو مقعد کے ارد گرد رگوں میں خون ٹھہر جاتا ہے۔ جسکی وجہ سے رگیں پھول جاتی ہیں اور مسوں کی شکل میں باہر نکل آتی ہیں۔ یا اندر ہی کی طرف تکلیف دینے لگتی ہیں۔ جبکہ یہ اندر اور باہر دونوں طرف بھی ہو سکتی ہیں۔

مریض جب پاخانہ کرنے لگتا ہے تو دباو پڑنے کی وجہ سے یہ پھٹ جاتی ہیں۔ اور ان سے خون بہنے لگتا ہے۔ اگر پاخانہ کے ساتھ خون آتا ہو تو یہ خونی بواسیر اور اگر خون نہ آئے تو بادی بواسیر کہلاتی ہے۔

بواسیر کی علامات اور کون لوگ اس مرض کا شکار ہو سکتے ہیں۔


بواسیر کی علامات یہ ہیں۔ مقعد میں خارش یا جلن، شدید قبض، پاخانہ کرتے وقت یا اس کے بعد خون آنا، مقعد کے مقام پر پھولی ہوئی رگوں کا محسوس ہونا۔ جبکہ معدے میں گیس اور تیزابیت، بھوک اور نیند میں کمی، جسمانی کمزوری، کمر اور جوڑوں میں درد اور طبیعت میں بیزاری بھی ہو جاتی ہے۔

دن بھر بیٹھ کر کام کرنے والے لوگ اور اکثر حاملہ خواتین قبض کا شکار ہو جاتے ہیں۔ جسکی وجہ سے بواسیر کا مرض ہو سکتا ہے۔ اس کے علاوہ وزن کی زیادتی، گرم اور چٹ پٹے کھانے کھانا اورریشہ دار غذا کا کم استعمال بھی اس کے اسباب ہو سکتے ہیں۔ جبکہ ضعیف لوگ، ڈپریشن کے مریض، ذیابیطس اور جگر کے امراض میں مبتلا افراد میں بواسیر ہونے کے امکانات زیادہ ہوتے ہیں۔

بواسیر کا علاج اور پرہیز، کچھ کارآمد گھریلو ٹوٹکے


بواسیر کے علاج کے لیے انجیر بہت مفید ہے۔ اس کے باقاعدہ استعمال سے پرانی سے پرانی بواسیر بھی ختم ہو جاتی ہے۔ یہ گیس اور قبض کا خاتمہ کرتی ہے اور خون کی نالیوں کو مضبوط کرتی ہے۔ لیکن اس کا استعمال باقاعدگی سے اور لمبے عرصے تک کرنا چاہیئے۔ مختلف لوگوں کو چار سے لیکر دس مہینے تک کے عرصے میں مکمل شفاء مل جاتی ہے۔

اس کا طریقہ یہ ہے کہ، روزانہ صبح خالی پیٹ ایک گلاس پانی میں ایک چمچہ شہد کا ملا کر پینا شروع کر دیں لیکن اس کے ساتھ انجیر کے پانچ دانے بھی کھانا ضروری ہیں۔ یہ اس مرض کا شافی علاج ہے۔

دو کپ گاجر کے جوس میں ایک کپ پالک کا جوس ملا کر روزانہ تین ہفتے تک پیجیئے۔ اس سے بھی ہر طرح کی بواسیر ختم ہو جائے گی۔

بیس گرام کالی مرچ، دو سو گرام زیرہ اور بیس گرام مصری لیجیئے اور ان تینوں اجزاء کو ملا کر گرائنڈر مشین میں پیس کر کسی شیشی میں محفوظ کر لیجیئے۔ اب روزانہ اس سفوف کا ایک چمچہ پانی کے ساتھ دن میں دو بار استعمال کیجیئے۔ یہ بھی ایک آسان گھریلو بواسیر کا علاج ہے۔

غذائی احتیاط اور پرہیز


اس مرض کے علاج کے لیے غذا میں پرہیز بہت ضروری ہے۔ اپنے روزمرہ کے کھانے پینے کے معمول کو صحیح کرنا بہت اہم ہے۔ غذا ہمیشہ اپنے مقررہ وقت پر کھایئے۔ پیٹ بھر کر کھانے سے اجتناب کیجیئے۔ ریشہ دار خوراک کا استعمال زیادہ کریں اور پانی جتنا زیادہ ہو سکے پیجیئے۔ اس کے علاوہ تازہ سبزی اور پھلوں کا استعمال بھی زیادہ کیجیئے۔

جبکہ بڑا گوشت، انڈے، تیز مصالحہ دار کھانے، تلی ہوئی اشیاء، چاول اور اس سے تیار کردہ چیزیں اور ڈبہ بند خوراک بالکل ترک کر دیجیئے۔ دودھ میں پانی ملا کر پیا کریں۔ کچے ناریل کا پانی بھی پیتے رہا کریں۔ سخت جگہوں پر بیٹھنے سے گریز کیا کیجیئے۔ رات کو سونے سے پہلے ایک چمچہ اسپغول کا چھلکا دودھ میں ڈال کر پی لیا کیجیئے۔

ہمیں امید ہے کہ بواسیر کا علاج اور پرہیز سے متعلق یہ مضمون آپ کے لیے مفید ثابت ہو گا۔

بواسیر کا علاج اور پرہیز جانئے اسکی علامات اور آسان دیسی نسخے

Bawaseer Ka Ilaj or Parhez Janiye Yeh Kyun Hota hei

Bawaseer Ka Ilaj or Parhez Janiye Yeh Kyun Hota hei

Bawaseer ka ilaj or parhez jan-ne keliye yeh post aakhir tak parhiye. Pehle jaante hein ke yeh marz kya hei. Insan ke Maqad mein jo khoon ki ragein hoti hein un mein jab Sozish, Kharish, Wurm ya Chhaale se ban jayen to is kefiyat ko Bawaseer kaha jaata hei. Jab yeh marz hota hei to uski bohat si wajuhaat ho sakti hein. Yeh marz moroosi bhi ho sakta hei lekin dayemi Qabz iski sab se bari waja hei.

Qabz ke bayis jab Pakhana sakht ho jaata hei to usko khaarij karne mein mushkil paish aati hei. Yun zor lagane ki waja se maqad ki Rago par dabao parta hei. Aur in Rago mein sozish paida ho jaati hei.

Agar is moqa par ehtiyat na ki jaye aur yeh kefiyat musalsal rehne lage to Maqad ke ird gird Rago mein Khoon theher jaata hei. Jiski waja se ragein phool jaati hein. Aur masso ki shakal mein bahir nikal aati hein. Yaa ander hi ki taraf takleef dene lagti hein. Jabke yeh andar aur bahir dono taraf bhi ho sakti hein.

Mareez jab pakhana karne lagta hei to dabao pardne ki waja se yeh phat jaati hein. Aur in se Khoon behne lagta hei. Agar Pakhana ke sath khoon aata ho to Khooni Bawaseer aur agar Khoon na aye to Baadi Bawaseer kehlati hei.

Bawaseer ki alamat aur kon log is marz ka shikar ho sakte hein

Bawaseer ki alamat yeh hein. Maqad mein kharish ya jalan, Shadeed Qabz, Pakhana karte waqt ya uske baad khoon aana, Maqad ke maqam par phooli hui Rago ka mehsoos hona. Jabke Mayde mein Gas aur tezabiyat, bhook aur Neend mein kami, jismani kamzori, Kamar aur Joro mein dard aur tabiyat mein bezari bhi ho jaati hei.

Din bhar baith kar kaam karne wale log aur aksar Hamila khwateen Qabz ka shikar ho jaate hein. Jiski waja se Bawaseer ka marz ho sakta hei. Iske ilawa wazan ki ziyadti, Garm aur chatpate khane khaana aur Raisha daar ghiza ka kam istemal bhi iske asbab ho sakte hein. Jabke Zaeef log, Depression ke mareez, Diabetes aur jigar ke amraaz mein mubtila logo mein Bawaseer hone ke imkanat ziyada hote hein.

Bawaseer ka ilaj or parhez kuch karamad gharelu totke


Bawaseer ka ilaj ke liye Anjeer bohat mufeed hei. Iske istemal se purani se purani Bawaseer bhi khatam ho jaati hei. Yeh gas aur Qabz ka khatma karti hei aur khoon ki naliyo ko mazboot karti hei. Lekin iska istemal baqaydgi se aur lambe arse tak karna chahiye. Mukhtalif logo ko 4 se le kar 10 months tak ke arse mein mukammal shifa mil jaati hei.

Is ka tareeqa yeh hei ke, rozana subha khaali pait 1 glass Paani mein 1 table spoon Shehed ka mila kar peena shuru kar dein. Lekin is mashroob ko peene ke saath Anjeer ke 5 daane bhi iske saath khana zaroori hein. Yeh is marz ka shaafi ilaj hei.

2 Cup Gajar ke rus mein 1 cup Paalak ka rus mila kar rozana 3 hafte tak pejiye. Is se har qism ki Bawaseer khatam ho jaye gi.

20 gram Kaali Mirch, 200 gram Zeera aur 20 gram Misri lejiye. Ab in teeno ko mila kar Grinder mein pees kar kisi sheeshi mein rakh lejiye. Rozana is safoof ka 1 chamcha pani ke sath din mein 2 baar istemal kejiye. Yeh bhi aik aasan gharelu Bawaseer ka ilaj hei.

Ghizayi ahtiyat aur Parhez


Is marz ke ilaj keliye ghiza mein parhez bohat zaroori hei. Apne rozmarra ke khane peene ke mamool ko sahi karna bohat ehem hei. Ghiza hamesha apne muqarrar waqt par khayen. Pait bhar kar khaane se ijtanab karein. Raisha dar khurak ka istemal ziyada karein aur paani jitna ziyada ho sake pejiye. Iske ilawa taaza sabzi aur fruits ka istemal bhi ziyada kejiye.

Jabke Bara gosht, Anda, Taiz masalah daar khaane, tali hui ashiya, Chawal aur is se bani hui cheezein aur dabba band khurak bilkul tark kar dejiye. Doodh mein pani mila kar piya kejiye. Kache Nariyal ka pani bhi peete rahiye. Sakht jagha par baithne se gurez kejiye. Raat ko sone se pehle 1 chamcha Ispaghol ka chhilka doodh ke saath le liya kejiye.

Hamein ummeed hei ke Bawaseer ka ilaj or parhez se mutalliq yeh mazmoon aapke liye mufeed saabit ho ga.

Bawaseer Ka Ilaj or Parhez Janiye Yeh Kyun Hota hei

Flax Seeds In Urdu | Alsi Ke Fayde Istemal Ka Tarika

Flax Seeds In Urdu | Alsi Ke Fayde

Alsi ke fayde ya benefits of Flax Seeds jaaniye Urdu mein. Jaan kar aap hairan reh jayen ge. Jo log Alsi ko apni daily khurak ka hissa bana lete hein woh ziyada sehatmand hote hein. Iska istemal hazaro saal se kiya jaa raha hei. Zmana qadeem ki tibb ki kutub mein bhi iski shifa bakhsh qualities ka zikr milta hei.

Flax seeds (meaning in Urdu: Alsi ke beej) mein 30 se 40 % hissa tail ke ilawa Omega-3 fatty acid, Fiber aur protein khasi miqdar mein hotay hein. Jabke Vitamin B-1, B-2, Vitamin C, E, Carotene, Iron aur Zinc bhi paye jaate hein. Iske ilawa kuch miqdar mein Omega-6, Potassium, Phosphorus aur Calcium bhi maujood hote hein.

Alsi ki Taseer pehle darja mein Garam hoti hei. Iska Tail bhi istemal kiya jaata hei lekin Alsi ke beej istemal karna ziyada mufeed hein. Kiyuke yeh Tail jaldi kharab ho jaata hei isliye kam miqdar mein kharidye aur jaldi use kar lejiye. Iske ilawaa yeh bhi yaad rakhye ke is tail ko khana pakane keliye kabhi bhi use nahi karna chahiye.

Flax seeds in Urdu, jaaniye Alsi ke Fayde


Alsi Cancer ko bardhne ya phailne se rokti hei. Is mein Ghair hal pazeer Raishe yani Phytoestrogens lignans bhi bhari miqdar mein hote hein. Yeh na sirf Jaraseem aur Virus ko door karte hein, balke Jism mein Rasoli yani Tumor bhi ban-ne nahi dete. Doctors ke khayal mein yeh Raishe Astrojen harmon ko Jism se nikal dete hein. Isi harmon ki waja se hi jism mein Tumors ki afzayish hoti hei. Yun jism mein Tumor nahi ban sakta aur agar pehle se Tumor mojood ho to woh bardhne nahi paata.


Alsi ya Flax seeds mein behtreen qism ka protein hota hei. Jo log kisi waja se Gosht ya Fish nahi kha sakte, woh Alsi ke beej kha liya karein. Is mein Omega-3 Fatty acid kaafi miqdar mein paya jaata hei. Yehi juz machli ke Tail mein bhi hota hei. Yeh khoon main thakke ban-ne se rokta hei. Cholesterol kam karta hei aur Dil aur Dimagh ki sehat keliye behtreen samjha jaata hei. Joro ke dard aur Dama ke marz mein bhi mufeed hei.

Flax seeds Diabetes yani Sugar ke marz mein bohat mufeed hein. Kiyuke yeh khoon mein shakar ki miqdar ko balance karne ki salahiyat rakhte hein.

Alsi mein maujood Fatty acids ghiza ke juzwe badan ban-ne ke amal ko taiz karte hein. Inki waja se jism mein se faaltu charbi ke pighalne mein madad milti hei. Jis se wazan kam hota hei.


Yeh Qabz mein bhi faydamand hei. Kiyuke Flax seeds mein bohat ziyada Raisha aur Qudrati Luab hota hei. Iske daily istemal se haazma to taqat milti hei.

Haamila aur doodh pilane waali khwateen agar rozana aik tea spoon Flax seeds oil yani Alsi ka Tail pee liya karein, to bache ka dimagh taiz ho jaata hei. Aur agar school jaane waale bache is Tail ke 5 drops rozana pee lein, to woh saans ki beemariyo se mehfooz rehte hein.

1 tola Alsi ke beej Paani mein josh de kar pees lein aur pee lein. Kuch din tak yeh amal karte rahein to Masana ki pathri nikal jaati hei.

Alsi ke istemal ka tarika


Alsi ke beej yani Flax seeds ka chilka kaafi sakht hota hei. Agar isko baghair chabaye kha liya jaye, to hamara haazma isko hazam nahi kar paata. Aur yeh saalim hi kharij ho jaata hei. Isliye inko use karne ka behtreen tarika yeh hei ke inko pees kar khaya jaye.


Aap Alsi khareed kar isko chhan kar aur saaf kar ke Fridge mein rakh dein. Rozana subha Khaali pait jitni zaroorat ho utni hi miqdar mein Flax seeds ko Grinder mein pees kar paani ke sath kha liya karein. Ya phir sirf aik hafte ki khurak ko pees kar air tight bottle mein daal kar fridge mein rakh lein.

Rozana aik chamach ka istemal kaafi hei. Aik hafte ke baad 2 chamach tak bardha dein. Istemal shuru karne ke 15 din ke baad se aapko is ke mufeed asraat mehsoos hone lagein ge. Lekin baaz logo ko 1 mahina bhi lag sakta hei. Lekin is amal ko jaari rakhna aapko bohat si beemariyo se bachaye rakhe ga.

Alsi ke fayde ya benefits of Flax seeds in Urdu jaan lene ke baad jab aap iska regular istemal karna shuru karo, to aik baat ka khas khayal rakhiye. Woh yeh ke aap ne apni daily routene se ziyada paani peena hei.

Flax Seeds In Urdu | Alsi Ke Fayde

Amla Ke Fayde Khushk Amla Powder Ke Fawaid

Amla Ke Fayde iske Juice aur Khushk Amla Ke Powder Ke Fawaid Janiye
Amla Ke Fayde is mash-hoor qaul se sabit hote hein. Yani 'Amle ka khaya aur bazurgo ka kaha baad mein zahir hota hei'. Matlab yeh ke iske fayde baad mein saamne aate hein. Is gol shakal ke phal mein quwat aur tawanayi ka khazana chupa hua hei. Yeh beshumar amraz ke ilaj mein moassar hei.

Amla ki taseer sard, khushk aur Peshab aawar beyan ki gayi hei. Lekin yaad rakhiye ke khushk mizaj waale phal qaabiz hote hein. Iska zayqa tursh aur kaseela hota hei. Yeh aam tor par medicines mein ziyada use kiya jaata hei. Khas tor par hair Tonics mein iska istemal bohat ziyada hei. Jabke sabzi ke tor per use karne ke ilawa iska Achar aur Murabba bhi banaya jaata hei.

Amla ke ghizayi ajza


Taza Amla mein 80 % Paani, Protein, Vitamin B, C, Calcium, Iron aur Phosphorus achi miqdar mein paye jaate hein. Is mein doosre tamam phalo se ziyada miqdar mein Vitamin C paya jaata hei. Amla se ziyada fayda haasil karne ke liye zaroori hei ke isko namak ke sath kacha khaya jaye. Is tarah se is mein maujood Vitamin C aur doosre minerals zaiya nahi hote.


Is mein bhari miqdar mein paaya jaane waala iron juzwe badan ban jaane ki salahiyat rakhta hei. Deegar zariyo se jo Iron haasil hota hei woh haazme mein kharabi aur Aanto mein sozish paida kar sakta hei. lekin Amla se jo Iron haasil hota hei woh saaf khoon ki pedayish ke liye best hota hei. Jabke yeh pait ko kharab bhi nahi hone deta. Albatta yeh thoda sa qaabiz hota hei.

Amla ke Fayde in Hindi Urdu


Isko ba qaydgi ke sath khane waalay log sehatmand aur lambi umar paate hein. Is mein aik aisa maada paaya jaata hei jo Budhaape ke aasar ko khatam kar ke taqat ko qayim rakhta hei. Amla aapko har marz se bachata hei aur aapki umar 100 saal tak jaa sakti hei.

Amla jism ke bohat se Ghadoodo ko mutaharrik karta hei. Dil ke amraaz mein iska istemal behad mufeed hei. Dil ke mareezo ko chahiye ke 3 daane Amle ke har roz kha liya karein. Agar Dil kamzor ho ya dharkan taiz ho jaati ho to Amle ka Murabba use kejiye. Is se aapki yeh kamzori door ho jaye gi.


Hath paaoon ki jalan, Nakseer aur jismani hiddat mein Amla ka istemal mukammal aaram deta hei. Jee matlana, Badhazmi, Khatte dakar aur Ishaal ho to yeh phal behtreen shaafi hei. Sar ka dard, sar chakrana, Dimaghi kamzori aur sar ke tamam amraaz ke liye Amla zabardast dawa hei.

Is aala phal ke kuch daane raat bhar ke liye paani mein bhigo kar rakh dejiye. Subha is paani se aankho ko dhoya jaye to aankho ki laali, Jalan aur nazar ki kamzori mein fayda hota hei. Aur agar is paani se sar ko dhoya jaye to Dimaghi kamzori aur sar chakrana theek ho jaye ga. Neez baal bhi narm-o-mulayim ho jaye gay.

Amla ka Juice ya Rus ke Fayde


Aap Amla ka Juice nikaal kar istemal kar sakte hein. Is maqsad ke liye Amlo ko kaat kar Guthliya alag kar lejiye. Phir kaate hue Amlo ko Juicer machine mein daal kar inka juice nikaliye. Aik kilo phal se lag bhag 2 glass juice nikal aye ga. Ab is juice ko kisi bottle mein daal kar fridge mein mehfooz kar dejiye.

Is juice aur Shehed yani Honey ka aik aik chamach 1 glass Paani mein mix kar ke roz subha pee lejiye. Aapko din bhar chaak-o-choband rakhe ga. Yeh antioxidants se bharpoor sharbat aik nehayat aala dawa ka kaam bhi karta hei. Is mein Diabetes aur Cancer samait beshumar amraaz ke khilaf ladne ki salahiyat hei. Cholesterol level ko theek karne ke ilawa wazan kam karne mein bhi moassar hei.

Jismani kamzori ka shikar log Amle ke juice aur Shehed ka aik aik chmach mix kar ke roz subha use karein. Yeh amal unki jismani kamzori door kar de ga. Sirf 2 hafte mein hi unke jism mein bharpoor tawanayi peda ho jaye gi.

Amla ke Juice mein Misri mila kar peete rehne se in beemariyo mein mukammal aaram milta hei. Rehem ki jalan aur beemariya, Masanay ki garmi, Peshab ki jalan ya ruk ruk kar aana aur Sozak.

Amla ka powder ya Khushk Amlo ka Safoof


Agar Taza Amla na mil sake to kisi Pansaar store se khushk Amlo ka powder ya safoof le lejiye. Aap yeh powder khud bhi tayyar kar sakte hein. Iske liye jab taza Amle mil jayen to unko kaat kar dhoop mein khushk kar lejiye. Iske baad grinder mein pees kar mehfooz kar lejiye. 

Yeh powder Amla ke juice ya rus ke mutabadil ke taur par use kiya jaa sakta hei. Jab is powder ko Shehed ke saath milaya jaye to aik umda majoon tayyar ho jaati hei. Is dawa se Phaiphro ke amraaz bhi theek ho jaate hein.

Bawaseer ke mareez agar yeh powder Gaaye (Cow) ke doodh ke saath subha aur sham use karein to bohat fayda ho ga. Bacha dani se khoon aata ho to din mein 3 ya 4 baar Amla ka powder paani ke saath khilane se marz door ho jaata hei. Is powder ke 2 chamach rozana roti ke saath khane se Budhapa door rehta hei. Agar jism mein kaheen Pathri ki shikayat ho to is powder ko Mooli ke juice mein mila kar use kejiye.

Agar is khushk Amla ke powder ko Manjan ke taur par use karein. To is se Daanto se khoon aana, Daant dard aur Daant hilne mein aaram aa jaata hei. Chot lagne se agar khoon band na ho to yehi powder zakham par daal kar patti baandh lejiye. Khoon ruk jaye ga neez is powder se Phoday bhi jald theek ho jaate hein.

Balo ki sehat ke liye


Balo ki mazbooti aur sehat ke liye Amla se behtar koi aur cheez nahi. Isko chahe khaya jaye ya iska paste Balo ki roots mein lagaya jaye, dono tarha se faydamand hei. Yeh balo ki roots ko mazboot karta hei aur inke natural color ko qayim rakhta hei.  Iske regular istemal se Ganje pan ka khatma ho jaata hei.

Amlo ko pees kar paani mein milaiye. Ab is paani se sar dhoya jaye to baal girna band ho jaate hein aur inki siyahi bhi qayim rehti hei. Amla ke powder ko paani ke saath mila kar Balo ki roots mein laip kar dejiye. Thori dair ke baad sar dho lejiye. Is se bhi baal khoob mazboot ho jayen gay.

Amla ke fayde yaqeenan hairat angeiz hein.

Amla Ke Fayde iske Juice aur Khushk Amla Ke Powder Ke Fawaid Janiye

Khajoor Ke Fayde Janiye Dates Benefits in Urdu Hindi

Khajoor Ke Fayde Janiye Dates Benefits in Urdu Hindi

Khajoor ke fayde is post mein aap jan sakte hein. Yeh aik nehayat Quwat bakhsh phal hei. Isko Sehra ki roti bhi kaha jata hei. Taza phal ko Khajoor aur khushk phal ko Chuhara kehte hein. Yeh ziyada tar Saudi Arab, Iran, Misr, italy, Spain aur Russia mein peda hota hei.

Khajoor ke ghizayi ajza


Tamam purani aur jadeed researches yehi baat saabit karti hein ke Khajoor aik ghizayi ajza se bharpoor phal hei. Har 100 Gram Khajoor mein taqreeban 315 Calories payi jaati hein. 

Aur isi miqdar ke phal mein 15.3% paani, 2.5% Protein, 0.4% Fats, 75.8% Carbohydrates aur 3.9% Fiber paya jata hei. Jabke isi miqdar mein Calcium 120 mg, Phosphorus 50 mg, Iron 7.3 mg, Vitamin C 3 mg aur Vitamin B complex ki kuch miqdar bhi payi jaati hei.

Khajoor Ke Fayde in Urdu Hindi


Khajoor ka mizaj Garm aur Tar hota hei. Badan ko taqat deti hei. Naya aur saaf Khoon peda karti hei isi liye kamzor logo ke liye behtreen ghiza hei. Khas tor per sardi ke mausam mein iska istemal behad mufeed hei.

Khajoor mayda ki islah karti hei. Iska regular istemal Qabz ka khaatma karta hai. Yeh aik hazam ke amal mein madad dene wala phal hei, albatta khud der se hazam hoti hei. Jism mein iske hazam ho jaane ke baad iska bach jaane wala mawad, Aanto mein jaa kar harkat peda karta hei. Jiski waja se Qabz door karne mein madad milti hei.

Minni ko gaarha kar ke Mardana taqat mein behad izafa karti hei. Peshab ki jalan khatam karti hei. Kisi bhi qisam ka wurm ho khajoor khaane se tehleel ho jata hei. Faalij aur Laqwa ke marz mein bhi iska khaana mufeed hota hei.

Khajoor ki Guthli ko jala kar iski Raakh ko mehfooz kar lein. Jab bhi kabhi zakham lag jaye aur Khoon beh raha ho to yeh Raakh zakham par laga dein. Is se khoon behna bhi band ho jaye ga aur yeh zakham ko bhi saaf kar de gi. Jabke yeh Raakh aap ke Daanto ke liye aik behad umda Manjan ka kaam bhi de sakti hei.

Kuch mazeed Khajoor Ke Fayde


Khajoor Dil, Jigar aur Dimagh ki kamzori ko door karti hei. Gurdo ko bhi quwat deti hei. Saans ki takleef mein aaram pohanchati hei. 

Dil ki kamzori door karne ke liye Khajoor ke chand daane raat bhar paani mein bhigo ker rakh dein. Subha uth kar Guthliya nikal kar in bhigoyi hui Khajooro ko isi paani mein masal kar pee lein. Yeh amal hafte mein 2 baar kiya karein. Kuch arse mein Dil ki kamzori door ho jaye gi.

Jinsi Kamzori door karne ke liye aap chand Khajoor ke daane bakri ke doodh mein raat ko bhigo kar rakh dejiye. Subha Guthliya nikal kar Khajooro ko masal dejiye aur isi doodh mein rehne dejiye. Ab is doodh mein thora sa Shehed milaiye. Iske ilawa pisi hui choti Ilaychi ki aik chutki milaiye aur pee lejiye.

Yeh nuskha kuch din tak use karte rahiye. Is se Jinsi taqat mein izafa hone ke ilawa aapki Timing bhi barh jaye gi.

Khajoor ke fayde jo ziyada ehem hein ham ne yahan beyan karne ki koshish ki hei. Agar aap kuch mazeed jankari rakhte hein to please comments kejiye.

Khajoor Ke Fayde Janiye Dates Benefits in Urdu Hindi

بادام کھانے کے فائدے، خواص، غذائی اجزا اور استعمال کا طریقہ

بادام کھانے کے فائدے، خواص، غذائی اجزا اور استعمال کا طریقہ
بادام کھانے کے فائدے جاننے کے لیے یہ پورا مضمون پڑھیں۔ بادام اپنی غذائی افادیت کی وجہ سے خشک میووں کا بادشاہ کہلاتا ہے۔ اسے پوری دنیا میں بڑی رغبت سے کھایا جاتا ہے۔ یہ بچوں، جوانوں اور بوڑھوں کے لیے یکساں مفید ہے۔

بادام میں وہ سب عناصر وافر مقدار میں پائے جاتے ہیں جو انسانی جسم کے لیے ضروری ہوتے ہیں۔ یہ ایک ایسی اعلی درجہ کی غذا ہے جس سےجسم اور دماغ دونوں کو فائدہ حاصل ہوتا ہے۔ یہ بہت سی بیماریوں کا علاج بالغذا ہے۔

بادام کے غذائی اجزا


بادام کے سو گرام مغز میں پروٹین 20.8%، معدنیات 2.9%، پانی 5.2%، چکنائی 58.9%، کاربوہایئڈریٹس10.5% اور ریشہ 1.7%ہوتا ہے۔ جبکہ معدنی اجزا میں فاسفورس 490 ملی گرام، فولاد 4.5 ملی گرام، کیلشیم 230 ملی گرام، نایاسین 4.4 ملی گرام اور وٹامن بی کمپلیکس کی کچھ مقدار شامل ہوتی ہے۔ اس میں پائی جانے والی چکنائی ایک فائدہ مند چکنائی قرار دی جاتی ہے۔ جو صحت کے لیے مفید ہوتی ہے۔ 

بادام سے متعلق کچھ اور معلومات


بادام کا مزاج گرم اور تر ہوتا ہے۔ اس کی دواقسام ہوتی ہیں، شیریں اور تلخ۔ کھانے کے لیے صرف شیریں قسم کا استعمال کرناچاہیئے۔ تلخ قسم کو کھانے سے منع کیا جاتا ہے۔

ضروری ہے کہ موسم کی مناسبت سے اس کو صحیح طریقہ سے استعمال کیا جائے۔ سردی کے موسم میں لوگ اس کو آسانی سے ہضم کر لیتے ہیں۔ گرمیوں میں بعض گرم مزاج کے لوگوں کو یہ موافق نہیں آتا۔ ایسے لوگ اس کا استعمال سردائی کی صورت میں کر سکتے ہیں۔

اس کو کھانے کا بہترین طریقہ یہ ہے کہ اس کو خوب چبا چبا کر کھایا جائے تاکہ اس میں لعاب دہہن شامل ہوتا رہے۔ اس طرح سے یہ زود ہضم ہو جاتا ہے۔

بادام کھانے کے فائدے


بادام کی تمام خوبیوں کا دارومدار کاپر، فولاد اور وٹامن بی 1 کے طبی کردار پر ہے۔ یہ اجزا آپس میں مل کر توانائی کو منظم کرتے ہیں۔ انہی اجزا کی وجہ سے دل، دماغ، اعصاب، جگر اور ہڈیوں کی کارکردگی بہتر ہو جاتی ہے۔

بادام کھانے سے اعصاب مضبوط ہوتے ہیں اور جسم پھلتا پھولتا ہے۔ اس میں شامل نشاستہ اور پروٹین کی وجہ سے جسم کو طاقت ملتی ہے۔ یہ جسم میں چربی کو بڑھنے نہیں دیتا۔ کیلشیم کی وجہ سے دانت اور ہڈیاں مضبوط ہو جاتے ہیں۔

جسمانی کمزوری دور کرنے کے لیے بادام انتہائی مفید ہے۔ صالح خون پیدا کرتا ہے۔ پورے بدن کی خشکی کو دور کرتا ہے۔ اگر 12 دانے بادام، 2 گرام کشمش کے ساتھ رات بھر پانی میں بھگو کر رکھیں اور صبح نہار منہ اچھی طرح چبا چبا کر کھایئں تو جسمانی کمزوری دور ہو جاتی ہے۔

نظر کی کمزوری کے لیے ایک نسخہ بہت زیادہ مستعمل ہے۔ روزانہ رات کو سونے سے پہلے 7 عدد بادام، 6 ماشہ سونف اور ایک تولہ مصری کو پیس کر گرم دودھ کے ساتھ کھایئں۔ صرف 40 روز تک ایسا کرنے سے آپ کی عینک یا تو اتر جائے گی یا اس کا نمبر کم ہو جائے گا۔ خیال رہے کہ سونے سے پہلے اس کی خوراک لینے کے بعد پانی نہیں پینا۔

بینائی کے لیے مفید ہونے کے علاوہ دماغی کام کرنے والوں کے لیے یہ ایک نعمت ہے۔ اس میں حراروں یعنی کیلوریز کی مقدار کافی زیادہ ہوتی ہے۔ اعصابی اور دماغی کمزوری کی وجہ سے اگر آپ تھوڑا سا کام کر کے تھک جاتے ہیں تو ایسے میں بادام کا استعمال آپ کی کھوئی ہوئی قوت کو بحال کر سکتا ہے۔

کچھ مزید فوائد اور خواص


بادام کے باقاعدہ استعمال سے مردانہ طاقت میں اضافہ ہوتا ہے۔ اس مقصد کے لیے بادام اور بھنے ہوئے چنے برابر مقدار میں لے کر روزانہ چبا کر کھا لیا کریں۔ یہ عمل منی میں اضافہ کرنے کے علاوہ جنسی قوت کی بحالی میں مددگار ثابت ہو گا۔

سردی کے موسم میں اگر بند نزلے کی شکایت ہو جاتی ہو تو یہ نسخہ استعمال کریں۔ 11 عدد بادام لے کر ایک کپڑے میں لپیٹ لیں اور ان کو گرم بھاپ میں رکھ دیں۔ کچھ منٹوں کے بعد انہیں نکال کر گرم گرم کھا کر بند کمرے میں لیٹ جایئں۔ صرف چندہی دن کے عمل سے بند نزلہ ٹھیک ہو جائے گا۔ جبکہ سردیوں میں باقاعدہ بادام کھانے سے نزلہ ہو گا ہی نہیں۔

وزن بڑھانے کے خواہش مند نوجوان روزانہ رات کو10 بادام اور 2 تولہ سبز کشمش کو پانی میں بھگو کر رکھ دیں۔ صبح اٹھ کر بادام چھیل کر کشمش کع ساتھ چبا کر کھا لیں اور اس کے بعد ایک گلاس دودھ پی لیا کریں۔ دو ماہ تک مسلسل ایسا کرنے سے وزن بھی بڑھ جائے گا اور صحت بھی اچھی ہو جائے گی۔

اکثر لوگ جب کافی دیر تک کام کرنے کے بعد اچانک اٹھ جاتے ہیں تو ان کا سر چکرا جاتا ہے اور آنکھوں کے سامنے اندھیرا سا آ جاتا ہے۔ اس کی وجہ دماغی کمزوری ہوتی ہے۔ ایسے لوگوں کو چاہیئے کہ روزانہ 10 عدد بادام خوب چبا چبا کر کھا لیا کریں۔

جن لوگوں کو گلے میں بلغم کی شکایت ہوتی ہے، ایسے لوگ اگر روزانہ صبح خالی پیٹ 5 دانے بادام کے ساتھ 3 دانے کالی مرچ کے ملا کر خوب چبا کر کھا لیا کریں تو یہ شکایت دور ہو جائے گی۔ جبکہ گلے کی خراش کی صورت میں بادام کو نمک لگا کر خوب اچھی طرح چبا کر کھایئں تو فائدہ ہو گا۔

اگر بادام کو انجیر کے ساتھ ملا کر صبح نہار منہ کھایا جائے، تو اس سے آنتوں کی غلاظت دور ہو جاتی ہے۔ غرض یہ کہ بادام اللہ تعالی کی ایک بے حد قیمتی نعمت ہے۔

بادام کا تیل یعنی روغن بادام


بادام کا تیل بھی نکالا جاتا ہے جو کہ قبض کشا ہونے کے علاوہ خشک کھانسی، مثانہ کی خارش اور آنتوں کی سوزش میں استعمال کیا جاتا ہے۔ اس تیل کو دودھ میں ملا کر پیاجائے تو آنتوں کی خشکی کو دور کر کے قبض کا خاتمہ کرتا ہے۔

کمر میں درد کے لیے رات کو سوتے وقت کمر پر روغن بادام کی مالش کروائیں۔ جبکہ خشک خارش کے علاج کے لیےبھی اس کی مالش مفید ہے۔

اگر ایک چمچہ روغن بادام کو ایک چمچہ آملہ کے رس کے ساتھ ملا کر روزانہ سر پر مساج کیا جائے تو بال گرنا بند ہو جاتے ہیں۔ نیز یہ بالوں کو سفید ہونے سے بھی روکتا ہے۔

اگر آپ کے سر میں درد رہتا ہے تو ایک چمچہ بادام کے تیل میں ایک ماشہ پسی ہوئی زاعفران ملا دیں۔ اب اس کو دن میں 2 یا 3 بار کچھ دیر کے لیے سونگھئے تو درد میں آرام آ جائے گا۔

سر پر اس کی مالش کرنے سے ناصرف بال مضبوط ہوتےہیں بلکہ اچھی اور گہری نیند بھی آتی ہے۔ حاملہ خواتین اگرآخری مہینوں میں اس کو روزانہ پی لیا کریں تو بچے کی ولادت میں آسانی ہوتی ہے۔

اس کی تلخ قسم کا تیل کاسمیٹکس میں استعمال کیا جاتا ہے۔ رنگ گورا کرنے اور چھائیاں دور کرنے والی کریموں میں اس کا استعمال کافی زیادہ ہے۔ اسی وجہ سے بین الاقوامی کاسمیٹکس کی مارکیٹ میں تلخ قسم کی مانگ بہت زیادہ ہے۔

ترقی یافتہ ممالک میں تلخ اور شیریں اقسام کو الگ الگ کھیتوں میں کاشت کیا جاتا ہے تاکہ یہ آپس میں مل نہ جائیں۔ چونکہ ہمارے ہاں ایسا نہیں کیا جاتا اسی وجہ سے یہاں ہر چوتھی یا پانچویں گری تلخ نکل آتی ہے۔

اس مضمون میں ہم نے جوتھوڑے سے بادام کے فائدے اور خواص بیان کیے ہیں۔ انہیں جان کر یقینا آپ اس کا باقاعدگی سے استعمال کرنا پسند کریں گے۔

بادام کھانے کے فائدے، خواص، غذائی اجزا اور استعمال کا طریقہ

انجیر کے فائدے اور بواسیر میں اس کے استعمال کا طریقہ

انجیر کے فائدے اور بواسیر میں اس کے استعمال کا طریقہ
انجیر کے فائدے جاننے کے لیے یہ مکمل مضمون پڑھیں۔ یہ جنت کا پھل ہے۔ تمام دنیا میں اور خاص طور پر عرب ممالک میں اس کو بے حد پسند کیا جاتا ہے۔ انجیر دو قسم کی ہوتی ہے، ایک جنگلی اور دوسری کاشت کی ہوئی۔ یہ درخت سال میں دو بار پھل دیتا ہے۔ یہ ایک ایسا نازک پھل ہے جس کو خشک کیے بغیر استعمال کرنا آسان نہیں۔ ہمارے ہاں اس کو خشک کرنے کے بعد ڈوری میں پرو کر بیچا جاتا ہے۔

تازہ اور خشک انجیر کے غذائی اجزاء


انجیر میں  پوٹاشیم، پروٹین، کیلشیم، فولاد، فاسفورس کے علاوہ وٹامن اے اور سی کافی مقدار میں موجود ہوتے ہیں۔ وٹامن بی اور ڈی کی بھی کچھ مقدار پائی جاتی ہے۔


انجیر میں پانی کی کافی مقدار پائی جاتی ہے۔ جبکہ اس میں پروٹین اور روغنیات کی مقدار بہت کم ہوتی ہے۔ خشک انجیر کی افادیت تازہ پھل کی نسبت ذیادہ ہوتی ہے۔ اس کا اہم ترین غذائی جزو شوگر ہے جو کہ اس میں 51 سے 64 فیصد تک پائی جاتی ہے۔

خشک انجیر سو گرام  تازہ انجیر سو گرام
 23% 88.1% پانی
 4.3%  1.3% پروٹین
 1.3%  0.2% روغنیات
 63.4%  7.6% کاربوہایئڈریٹس
 5.6%  2.2% ریشہ
 2.4%  0.2% معدنیات

انجیر کے فائدے


انجیر کے فائدے بے شمار ہیں۔ مزاج کے لحاظ سے انجیر گرم اور تر ہوتی ہے۔ اس کی بہترین قسم سفید ہوتی ہے۔ یہ دوا بھی ہے اور غذا بھی۔  بہتر ہے کہ اس کو روزانہ کسی ایک وقت پر کھانے کا معمول بنا لیا جائے۔

 انجیر کمزور لوگوں کے لیے انمول نعمت ہے۔ جسم کو فربہ اور خوبصورت بنانے کے علاوہ چہرے کو سرخ و سفید بناتی ہے۔ یہ طبیعت کو نرم کرتی ہے، اس کو کھانے سےذہنی اور جسمانی تھکان دور ہو جاتی ہے۔ 

گردوں اور مثانے کو صاف کرتی ہے۔ اس کے چند دانے خوب چبا چبا کر کھایئں تو بادی پن اور پیٹ کے کیڑے ختم کرنے کے علاوہ سانس اور خون کے کئی امراض سے نجات مل جاتی ہے۔

 عام جسمانی کمزوری اور بخار کی حالت میں اس کا استعمال مفید ہوتا ہے۔ بخار کی حالت میں جب منہ بار بار خشک ہو جاتا ہو تو اس کا گودا منہ میں رکھنے سے بہت فائدہ ہوتا ہے۔

انجیر کو نہار منہ کھانا سب سے زیادہ فائدہ مند ہوتا ہے۔ اگر اس کو بادام اور اخروٹ  کے ساتھ ملا کر کھایا جائے، تو یہ خطرناک زہروں سے بھی آپ کی حفاظت کر سکتی ہے۔ خون میں سے زہریلے مواد کو ختم کر کے خون کے سرخ ذرات میں اضافہ کرتی ہے۔

انجیر کسی بھی قسم کی پتھری پیدا ہونے نہیں دیتی۔ یہ گردوں، مثانے اور پتے میں سے پتھری کو تحلیل کر کے نکال دیتی ہے۔ اس مقصد کے لیے نہار منہ روزانہ چند دانے کلونجی کے تیل یا صرف کلونجی کے ساتھ کھانا چاہیے۔ 

ہائی بلڈ پریشر کے مریضوں کے لیے یہ ایک نعمت ہے۔ اس کو مسلسل کھانے سے خون کا گاڑھا پن ختم ہو جاتا ہے اور خون نالیوں میں جمتا نہیں۔

انجیر کے مزید فوائد


دماغی کمزوری کے مریض اگر روزانہ صبح ناشتے میں 7 دانے بادام اور ایک اخروٹ کے ساتھ 3 یا 4 دانے انجیر کے کھا لیا کریں تو ان کی یہ شکایت دور ہو جائے گی۔

انجیر کو دودھ میں پکا کر پھنسی پھوڑوں پر لگانے سے وہ جلد پھٹ جاتے ہیں۔

انجیر خشک ہو یا تازہ، دونوں صورتوں میں جلاب آور ہے۔ اس کے باریک بیجوں میں آنتوں  کو صاف اور متحرک رکھنے کی تاثیر پائی جاتی ہے۔ دائمی قبض دور کرنے کے لیے انجیر کو پانی میں بھگو کر کچھ گھنٹوں کے لیے رکھ دیں، جب وہ پھول جایئں تو دن میں دو بار نوش کریں۔

اگر اس کو رات بھر پانی میں بھگو کر رکھیں تو صبح کو یہ پھول  جائیں گے۔ اب اس کو کھایا جائے تو گلہ بند ہو جانا یا بیٹھ جانا جیسے امراض کا شافی علاج ہے۔

سردی کے موسم میں خشک انجیر بچوں کی نشوونما کے لیے بے حد فائدہ مند ہے۔

اس کا باقاعدہ استعمال قولنج کے مرض سے محفوظ رکھتا ہے۔ 

مردانہ کمزوری کی صورت میں اس کو دوسرے ڈرائی فروٹس جیسے بادام اور کھجور کے ساتھ ملا کراورمکھن کو بھی ملا کر استعمال کیا جائے تو مردانہ کمزوری یقینی طور پر دور ہو جاتی ہے۔ 

کھانسی، بلغم اور دمہ کے مرض  میں بھی  مفید ہے۔ اس کے کھانے سے بلغم کا اخراج بڑھ جاتا ہے جس سے مریض کو افاقہ ہوتا ہے۔

یہ قابل ہضم پھل فضلات کو خارج کرتا ہے۔ جگر اور تلی کے سدوں کو کھولتا ہے۔ اس کا باقاعدہ استعمال منہ کی بدبو کو بھی ختم کرتا ہے۔

اس شاندار پھل کے چند دانے روزانہ کھانے سے کمر کا درد ختم ہو جاتا ہے۔ جبکہ اس کو اخروٹ کے ساتھ کھانے سے فالج کا خطرہ ٹل جاتا ہے۔

انجیر کو ایک ہفتے کے لیے  سرکے میں ڈال کر رکھ دیں۔ اب کھانا کھانے کے بعد 2 یا 3 دانے کھانے سے تلی کا ورم دور ہو جاتا ہے۔

انجیر کو بھگو کر کھانے سے یہ زودہضم ہو جاتی ہے۔ البتہ جس پانی میں بھگویا جائے وہ پانی بھی پی لینا چاہیئے۔ کیونکہ اس کے بہت سے اجزاء پانی میں شامل ہو جاتے ہیں۔

بواسیر میں اِنجیر کے استعمال کا طر یقہ


انجیر بواسیر کے لیے اکسیر ہے۔ اس کو روزانہ کھانے سے پرانی سے پرانی بواسیر بھی ختم ہو جاتی ہے۔

اگر بواسیر میں درد زِیادہ ہوتا ہوتو اس کے لیے ہر روز صبح  خالی پیٹ پانی میں شہد  ملا کرپیئیں اوراس کے ساتھ 5دانے اِنجیر  کے کھا  لیا کریں۔ اس عمل کو  معمول بنا لیں تو  اللہ کے کرم سے چند ہی مہینوں میں  بواسیر کےمسّے خشک ہوجائیں گے۔ یہ عمل خُونی بواسیر والے مریضوں  کےلئے بھی فائدہ  مندہے۔ 

اگر مریض کو  بدہضمی زیادہ ہوتی ہو  تو  کھانا کھانے سے آدھا گھنٹہ پہلے  3 دانے اِنجیر  کے کھلایئں اور اگر معدے میں بوجھ سا محسوس  ہوتا ہو تو   کھانا کھا لینے  کے بعد  3 دانے اِنجیر کھا لینا چاہیئے۔

انجیر کے فائدے آپ کو دعوت دیتے ہیں کہ آپ اس اعلی پھل کواپنی روزمرہ غذا کا لازمی حصہ بنائیں۔

انجیر کے فائدے اور بواسیر میں اس کے استعمال کا طریقہ

Dengue Bukhar ki Alamat Ilaj aur Bachne ke Tarike

Dengue Bukhar ki Alamat Ilaj aur Bachne ke tarike
Dengue Bukhar koi naya marz nahi hei. Yeh aik makhsoos qism ke machar ke kaatne se insani jism mein daakhil hota hei. Iska ziyada tar shikar Asiai mumalik ke log hein. Lekin ghubrane ki koi baat nahi, yeh mukammal taur par aik qabil e ilaj marz hei.

Dengue Bukhar ki alamat


Is marz mein mareez ko taiz bukhar ke saath saath sir mein bohat sakht dard hone lagta hei. Blood pressure bohat kam ho jaata hei. Jism achanak bohat thanda ho jaata hei.

Ghutnon mein takleef aur joron mein bhi dard hona shuru ho jaata hei. Jism insani ki Quwat e Mudafeyat taqreeban khatam ho jaati hei. Surkh rang ke dhabbe poore jism par zahir hone lagte hein.

Dengue Bukhar ke Marahil


Dengue Bukhar ke 4 marahil hote hein. Ibtadai 2 marahil mein ilaj aasani se ho sakta hei. Lekin aakhri dono Marahil mein jaan bachana namumkin ho jaata hei. Yeh chaaron marahil neeche byan kiye gaye hein.

Pehla marhala, Mareez ko shadeed Bukhar aur ooper byan karda alamaat bhi zahir hone lagti hein.

Doosre marhale mein pehle marhale ki alamaat ke saath saath bari Aant, Masoorhon aur jild se khoon behne lag jaata hei.

Teesre marhale mein Nizam e Dauran e khoon bhi shadeed taur par mutassir hota hei.

Chothe marhale mein mareez ke liye takleef na qabile bardasht ho jaati hei. Aur Quwat Mudafeyat ke naa hone ki wajha se woh kai beemariyon ka shikar ho jaata hei.

Dengue Bukhar se bachao ke liye ahtiyati tadabeer


W.H.O ke mutabiq duniya bhar mein jitni bhi amwaat hoti hein, un mein Dengue Bukhar se hone waali amwaat ka tanasub 4% hei. Sirf ahtiyat se hi is marz se mukammal bachao mumkin hei.

Chunke is marz ko phelaane waale Machar sirf saaf paani mein rehna pasand karte hein. Isliye apne gharon aur baagheecho mein kaheen par bhi saaf paani ko khada mat hone dein. Saaf paani ke tamam bartan dhaanp kar aur water tank ko hamesha dhakkan laga kar rakhein.


Machar maarne waale spray ka baa qaydgi se istemal karein. Aur ghar ke har kone aur bistron aur Sofa set ke neeche spray laazmi kiya karein.

Dengue ke Machar ziyada tar Suraj ke nikalne aur doobne ke auqat mein hi hamla aawar hote hein. Isliye in auqat mein khasoosi ahtiyat kiya karein.

Machar daani aur Machar bhagane waale lotion ka istemal bhi aik achi ahtiyat hei.

Dengue Bukhar ka ilaj


Kamzor Quwat mudafeyat ke haamil log, kam sehat mand afraad, Boorhe log aur Bache is marz se zyada mutasir hote hein. Albatta jadeed researches ke anosaar yeh Bukhar itna khatarnaak nahin jitna is ko samjha jaata hei. Zaroori dekh bhaal aur baa qayda ilaj se sirf aik hafte se do hafte ke dauran mukammal shifa haasil ho jaati hei.

Tibbi mahireen ki research ke anosaar, Dengue Bukhar ke ilaj ke liye Papeete ke patte aur Shehed yani Madhu ka istemal behtreen saabit hua hei.


Hamare piyare Rasool (Sall ALLAH O alaihe wasallam) Shehed ko Paani mein hal kar ke peena pasand farmaate thay. Bilkul isi tarha aik cup neem garam paani mein aik chamcha Shehed mila kar din mein 3 baar khane se kuch deir pehle mareez ko pila diya karein.

Papeete ke patton ka rus nikaal kar subha aur shaam pilana bhi Dengue Bukhar ka Shaafi ilaj hei.

Bakri ka Doodh bhi is marz mein nehayat mufeed saabit ho sakta hei. Mareez ko din mein baar baar Bakri ka doodh pilaate rehna chahiye.

Hamain ummeed hei ke Dengue Bukhar ki alamat aur ilaj ke baare mein yeh maloomat aapke kaam aayen gi.

Dengue Bukhar ki Alamat Ilaj aur Bachne ke tarike

Achi Neend Lene Ka Fun ya Behtreen Tarika Janiye in Hindi Urdu

Achi Neend Lene Ka Fun in Hindi Urdu
Achi neend ALLAH taala ki bohat bari nemat hei. Iski kami se Dimagh susti ka shikar ho jaata hei aur kaam karne ki salahiyat mutasir hoti hei.

Agar neend ki kami musalsal jaari rahe to insan bohat saare jismani aur Zehni masayil ka shikar ho sakta hei. Jabke raat ki mukammal neend lene se Jism aur Dimagh ko sakoon milta hei. Aur insan roz marah ke kaam karne ke qabil ho jaata hei.

Achi Neend Lene Ka Fun in Hindi Urdu

Gehri Neend aankho ki thakawat door kar ke unko tar o taza rakhti hei. Neend puri na hone se aankho ko bohat nuqsan hota hei. Raat ko jaldi sona aur Subha sawere uthna, insan ko tandrust banaye rakhta hei.

Raat bhar ki puri Neend aur mukammal aaram ki is tadbeer se Dimagh aur Aasaab ko woh taaqat muyassar aati hei. Jo phir se din bhar ke masayil, mushkilaat aur takleef deh haalaat se muqabla karne ki salahiyat peda kar deti hei. Lehaza har insan ko is sunehre asool "Jald sona aur Subha sawere uthna" ko apnana chahiye.

Achi neend lene ke liye kya kiya jaye


Aksar logon ko mukhtalif wajuhaat ki bina par Neend nahi aati. Isliye zaroori hei ke un asbaab ka pata lagwa kar unko door kiya jaye. Jinse Neend mein khalal peda hota hei. Maslan tafikraat aur gham o ghussa se chunke Dimagh mein khoon munjamid ho jaata hei. Isliye in kefiyaat mein Neend be intaha mutasir hoti hei.


Lehaza iska khayal rakhna chahiye ke sote waqt Dimagh tamam qism ki uljhano se aazad ho. Iski tadbeer yeh hei ke sote waqt aaram deh bister par haath pair phela kar khaali zehen ke saath letaa jaye. Is surat mein meethi aur gehri Neend haasil ho sake gi.

Iske ilawa yeh bhi khayal rakhiye ke roshni ki koi kiran sone waale ki aankho par na pare. Warna khoon ka bahao Dimagh ki taraf barh jaye ga. Aur aasabi nizam mein harkat peda ho jaye gi. Jis se neend khasi mutasir ho jaye gi.

Achi Neend Lene Ka Fun The Art of Sleeping


Achi Neend Lene Ka Fun in Hindi Urdu
Apni be aitdaliyon ki waja se insan ne neend jesi nemat ko apne liye museebat bana rakha hei. Dr. Hamza Al Hamzawi ne apne lecture The Art of Sleeping, yani neend lene ka Fun mein achi neend lene ke liye apni research ke mutabiq kuch tarike bataye hein. Jinke mutabiq:

Isha ke baad raat 9 se 12 baje tak sona: In auqaat ke doraan sona sab se ziyada fayda mand hei. Aik insan apni neend ka 80% hissa in auqaat mein pura kar sakta hei. Kiunke in auqaat mein neend ke liye barkat hei, so is waqt ki neend ka matlab: Aik Hour ki neend = Teen hour ki neend.

Is waqt ke doran Dimagh ka Gland aik harmon peda karta hei. Jo hamein achi neend lene mein madad deta hei. Yeh sirf usi soorat mein peda hota hei agar:

1. Sone ke doran kamre mein andhera ho. 
2. Agar neend nahi aa rahi tab bhi insan sakoon se lait jaye.


Raat 12 baje se 2 baje tak sona:  In auqaat ke doraan sone se insan ki 20% gehri neend puri ho jaati hei. Iske baad ka sona achi neend ke liye fayda mand nahi. Kiunke insan apni 100% neend puri kar chuka hota hei. In auqaat mein sone ka matlab:  1 Hour ki neend = 1 Hour ki neend

2 baje se 5 baje tak yani Fajar se pehle ke auqaat: Yeh waqt kuch yaad karne ke liye behtreen hei. ALLAH ko yaad karne ke liye, Zikar aur Astaghfaar karne ke liye, yaa zehni irtakaz aur Muraqba karne ke liye.

Fajar ki namaz se Suraj nikalne tak sona:  In auqaat mein Dimagh aik doosra harmon khaarij karta hei. Yeh Harmon in auqaat mein sirf isi soorat mein khaarij hota hei jab:

1. Insan jaag raha ho.  
2. Roshni ke saath halki phulki warzish bhi ho.

Yeh waqt hei Zikar o Azkaar ka, ghor o fikar karne aur din ko hone waale kaamon ki mansooba bandi karne ka.

Din ko sona (Fajar ke baad): Yeh bilkul bhi fayda mand nahi.  In auqat mein sone ka matlab: Teen Hour ki neend = Aik Hour ki Neend

Is waqt sone mein koi barkat nahi. Balke yeh saara din kaahili, susti aur tawajja mein kami ka bayis banta hei.

Achi neend ke liye kuch mazeed info


Insani Dimagh mein Harmons ka khaarij hona 40 saal ki umar ke baad kam hota jaata hei. Aur 50 saal ki umar mein yeh ikhraaj ruk jaata hei. Is waqt insan ka jism us harmon ko hi use karta hei. Jo guzishta saalon mein jism main jama hua tha.

Ab agar koi insan Alzhimer aur Schizophrenia jaise Dimaghi amraaz ka shikaar hota hei. To iska matlab yeh hei ke woh zindagi bhar der se soya karta tha.

Agar aap Dr. Hamza ke bataye hue is tarike se achi neend haasil karne ki aadat daal lein. To aapko kabhi bhi neend ki kami ka saamna nahi karna pare ga.

حجامہ کیا ہے، فوائد, سنت طریقہ اور احتیاطی تدابیر

حجامہ کیا ہے اس کے فوائد, سنت طریقہ اور بعد کی احتیاطی تدابیر

حجامہ کیا ہے


سب سے پہلے جانتے ہیں کہ حجامہ کیا ہے۔ انسانی جسم کی صحت کا دارومدار صاف خون پر ہے۔ اگر خون فاسد ہوتو انسان بہت سی پیچیدہ بیماریوں میں مبتلا ہو جاتا ہے۔ حجامہ ایک ایسا طریقہء علاج ہے کہ جس میں جسم  کے مخصوص مقامات پرایک خاص طریقے سے خفیف سے کٹ لگا کر فاسد خون خارج کیا جاتا ہے۔

یہ طریقہءعلاج صدیوں سے رائج ہے۔ اور اس کی سب سے زیادہ اہمیت اس وجہ سے ہے کہ یہ مسنون ہے۔ حجامہ ایک مکمل طریقہ ء علاج ہے۔ جن لوگوں کو کہیں سے بھی شفا نہیں ملتی وہ حجامہ کے معجزاتی اثرات سے شفایاب ہو رہے ہیں۔

ہمارے پیارے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے۔ بہترین علاج جسے تم کرتے ہو حجامہ لگوانا ہے۔ (صحیح بخاری ۱۷۳۵)

آپ صلی اللہ علیہ وسلم خود بھی حجامہ لگوایا کرتے تھے۔ معراج کے موقع پر ملائکہ نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے عرض کی کہ اپنی امت سے کہیں کہ وہ حجامہ لگوائیں۔ صحیح بخاری میں حجامہ پر پانچ ابواب موجود ہیں۔

عرب ممالک کے علاوہ جنوب مشرقی ایشیا کے ملکوں میں بھی یہ طریقہ علاج رائج ہے۔ جبکہ چین کا تو یہ قومی علاج ہے۔ یہ گرم اور سرد دونوں علاقوں میں مستعمل ہے۔ مغربی یونیورسٹیوں میں جو طلبہ متبادل میڈیسن پڑھتے ہیں ان کو حجامہ پڑھایا اور سکھایا جاتا ہے۔


یورپ کی یونیورسٹیوں میں ابن سینا کی حجامہ پر لکھی کتابیں پڑھائی جاتی رہی ہیں۔ مسلسل تحقیقات کے بعد امریکہ سمیت تمام مغربی دنیا نے بھی حجامہ کی افادیت تسلیم کر لی ہے۔ 

مغربی ماہرین کی مسلسل تحقیق کی وجہ سے اب حجامہ میں بہت سی نئی تکنیک متعارف کرا دی گئی ہیں۔ انسانی جسم میں تقریبا ایک سو تینتالیس ایسے مقامات کا انتخاب کر کے ایک نقشہ مرتب کیا گیا ہے جہاں پر حجامہ لگوایا جا سکتا ہے۔

وہ اصول جن کے مطابق حجامہ کیا جاتا ہے۔


عام طور پر حجامہ ان مقامات پر کیا جاتا ہے جہاں بیماری ہے۔ مثلا اگر کسی کو معدے کی بیماری ہے تو معدہ کے اوپر حجامہ کیا جاتا ہے اور اگر کسی کو جگر کے مسائل ہیں تو سینے پر دائیں طرف جگر کے اوپر کیا جاتا ہے۔

اگر کسی کو سر میں تکلیف ہوتی تھی تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم سر کا حجامہ کرنے کی ہدایت فرماتے تھے۔ کئی امراض میں اضافی طور پر گردن کے قریب کندھوں کے درمیان بھی کیا جاتا ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم خود بھی اس مقام پر حجامہ کرواتے تھے۔

حجامہ کتنی دفعہ کرنا چاہیے؟


اگر ایک دفعہ حجامہ کروانے سے مرض ٹھیک نہیں ہوتا تو پھر دو ہفتے یا ایک مہینے کے وقفے سے تین سے سات دفعہ تک کروانا چاہیے۔ یا جیسے طبیب تجویز کرے۔

حجامہ کن کن بیماریوں میں کروایا جا سکتا ہے؟


اللہ تعالی نے حجامہ میں بہت شفا رکھی ہے اور تقریبا سبھی بیماریوں میں حجامہ کروایا جا سکتا ہے۔ خاص طور پر کچھ بیماریوں میں اس کے معجزاتی اثرات سامنے آئے ہیں۔

جیسے شب کوری، نظر کی کمزوری، ڈپریشن، درد شقیقہ، چکر آنا، بلڈ پریشر، درد گردہ، کندھوں کا درد، ٹانگوں کا درد، کمر درد، عرق النساء، دماغی امراض، برص، الرجی، جادو سحر اور بہت سی دوسری بیماریاں۔ اگر جسم میں کہیں بھی درد ہو تو اس مقام پر بھی حجامہ لگوایا جا سکتا ہے۔

حجامہ کا سنت طریقہ


حجامہ کیا ہے اس کے فوائد, سنت طریقہ اور بعد کی احتیاطی تدابیر
حجامہ کیا ہے اس کے فوائد, سنت طریقہ اور بعد کی احتیاطی تدابیر
حجامہ کیا ہے اس کے فوائد, سنت طریقہ اور بعد کی احتیاطی تدابیر

حجامہ کے فوائد


خون کی کمی امراض کو جنم دیتی ہے۔ حجامہ سے جلد کے علاوہ عضلات کو بھی حرکت ملتی ہے۔ جس سے بافتوں میں موجود فاسد خون خارج ہو جاتا ہے۔ یوں دوران خون بہتر ہونے سے ان جگہوں پر بھی خون کی رسائی ہو جاتی ہے جہاں تک پہلے خون نہیں پہنچ رہا تھا۔ حجامہ کے درج ذیل فوائد ہیں۔

جانئے کشمش کے فوائد

خون صاف کرتا ہے جس سے شریانوں پر اچھا اثر پڑتا ہے۔ حرام مغز کو فعال بناتا ہے۔ پٹھوں کے درد اور اکڑاو میں فائدہ پہنچاتا ہے۔ 

انجائنا، دمہ اور پھیپھڑوں کے امراض میں مفید ہے۔ درد شقیقہ، سر درد، دانتوں کے درد اور پھوڑوں کا بہترین علاج ہے۔

ماہواری بند ہونے اور رحم کی بیماریوں کی تکلیف دور کرتا ہے۔ ہائی بلڈ پریشر میں آرام پہنچاتا ہے۔ عرق النساء، گنٹھیا اور نقرس کے دوروں سے نجات دلاتا ہے۔

سینہ کمر اور کندھوں کے درد کے علاوہ جسم میں کہیں بھی درد ہو تو وہاں حجامہ کروانا مفید ہے۔

ان سب کے علاوہ آنکھوں کی بیماریاں، کاہلی، سستی، زیادہ نیند آنا، کیل مہاسے، ناسور، خارش، ذہر خورانی، الرجی، ورم گردہ اور پیپ والے ذخموں کے لیےبھی حجامہ فائدہ مند ہے۔

جبکہ ضروری ہے کہ صحتمند لوگ بھی حجامہ کروایئں کیونکہ نا صرف یہ مسنون ہے بلکہ بیماریوں کو حملہ آور ہونے سے بھی روکتا ہے۔

حجامہ کے لیے احتیاطی تدابیر


حجامہ کروانے کے بعد ایک گھنٹے تک کچھ کھانے پینے سے اجتناب کریں۔

بہت زیادہ دبلے اور کمزور افراد، اسقاط کروانے والی مریضہ، جگر کے شدید امراض میں مبتلا افراد،  گردوں کی صفائی کروانے والے مریض اور وہ امراض جن میں خون نہیں رکتا، ان کے مریض حجامہ نہ کروایئں۔

ضعیف لوگ جو کمزور بھی ہوں اس وقت تک نہ لگوایئں جب تک کہ اشد ضرورت نہ ہو۔ پانی کی کمی کا شکار بچوں کو بھی نہ لگوایئں۔ غسل کے فوری بعد اور قے ہونے کے فوری بعد بھی نہ لگوایئں۔

دل کا والو تبدیل کروانے والے حضرات بھی نہ لگوایئں۔ البتہ کسی ماہر کی نگرانی میں لگوا سکتے ہیں۔ پیروں اور گھٹنوں پر سوجن ہو تو حجامہ اس مقام سے دور ہٹ کر احتیاط سے لگایئں۔

کم فشار خون کے مریضوں کو کمر کے قریب والی ریڑھ کی ہڈیوں کے قریب نہیں لگانا چاہیے۔ اور ایک ہی وقت میں دو سے زیادہ حجامہ نہیں لگانا چاہیے۔

خون کی کمی کے مریض اپنے معالج کے مشورے سے حجامہ لگوایئں۔ حاملہ خواتین کو ابتدائی تین ماہ میں نہیں لگوانا چاہیے۔

نشہ آور ادویات کھانے والے اور خون کو پتلا کرنے والی ادویات کھانے والوں کو بھی نہیں لگوانا چاہیے۔

ذیابیطس کے مریض حجامہ لگوانے سے پہلے اپنی شوگر چیک کروا لیں شوگر تقریبا سو ملی گرام ہونی چاہیے۔

ضروری نوٹ: یہ مضمون، حجامہ کیا ہے اس کے فوائد, سنت طریقہ اور بعد کی احتیاطی تدابیر لکھنے کے لیے جناب ڈاکٹر امجد احسن علی صاحب کی کتاب  الحجامہ حجامہ (پچھنا) علاج بھی سنت بھی، سے مدد لی گئی ہے۔  

حجامہ کیا ہے اس کے فوائد, سنت طریقہ اور بعد کی احتیاطی تدابیر